وزیراعظم کی میڈیاٹیم سے ملاقات، سوشل میڈیا پرکڑی تنقید

وزیراعظم عمران خان کرونا وائرس میں مبتلا ہونے کے بعد قرنطینہ میں ہیں، تاہم میڈیا ٹیم کے اجلاس کی صدارت پر انہیں سوشل میڈیا پر کڑی تنقید کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔
وزیراعظم عمران خان اور ان کی اہلیہ کا چند روز قبل کرونا ٹیسٹ مثبت آیا تھا جبکہ انہوں نے ٹیسٹ سے دو روز پہلے ہی کرونا وائرس سے بچاؤ کی ویکسین لگوائی تھی۔
وزیر اطلاعات و نشریات شبلی فراز کی جانب سے ٹویٹر پر ایک تصویر شیئر کی گئی جس کے کیپشن میں لکھا گیا کہ وزیراعظم عمران خان اپنے گھر بنی گالہ میں میڈیا ٹیم سے ملاقات کررہے ہیں۔
ٹویٹر پر ایک خاتون صارف نے اس پوسٹ پر شدید تنقید کرتے ہوئے لکھا کہ کتنی شرمناک ہے یہ تصویر، مُلک کا کرونا میں مبتلا وزیراعظم خود لوگوں میں بیٹھا ہوا ہے تو باقی عوام کو ایس او پیز پر عمل کرنے کی کیا ہدایت دے گا؟۔
ایک صارف نے لکھا کہ عوام کو بھاشن دینے والے خود کرونا کو کتنا سیریس لیتے ہیں ایک تصویر سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے۔
اے ایس کے 7799 نامی صارف نے برطانوی وزیراعظم بورس جانسن کی ایک تصویر کے ساتھ کیپشن لکھا کہ ذہین اور سمجھدار حکومتیں اپنی اور دوسروں کی حفاظت کیلئے اس طرح کام کرتی ہیں جب ان کا وزیراعظم بیمار ہو۔
ایک صارف نے حکومت کو مشورہ دیا کہ اجلاس آن لائن بھی بلایا جاسکتا تھا، آج کے جدید دور میں کون ایسا رسک لے سکتا ہے جبکہ ساری دنیا کا کاروبار ورچوئل چل رہا ہے۔
کسی نے کہا کہ جناب پریڈ میں نہیں گئے کہ کرونا ہے، لیکن اپوزیشن کو دبوچنے کیلئے میڈیا ٹیم کو گھر پر ہی بلالیا۔
ایک صارف نے شدید ناراضی کا اظہار کرتے ہوئے لکھا کہ یہ ورک فرام ہوم نہیں ہے، بند کمرہ اس میٹنگ میں اتنے سارے لوگوں کے ساتھ کیمرہ مین اور ملازمین بھی ہوں گے، یا تو کرونا نہیں ہوا یا پھر انہیں دوسروں کی زندگی کی پرواہ نہیں ہے۔
جس پر ایک صارف نے انہیں جواب دیتے ہوئے لکھا کہ شبلی فراز صاحب 4، 5 دن بعد اپنا بھی کرونا وائرس کا ٹیسٹ کروالیجیے گا۔

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

BFT News © 2022 Frontier Theme